ڈاکٹرصاحب_!" مریض نے روہانسےلہجے میں ماہ

ڈاکٹرصاحب_!" مریض نے روہانسےلہجے میں ماہر نفسیات کو اپنی الجھن بتائی ِ
"مجھے موٹر سائکل چلاتے ہوئے رکشوں کے اند جھانکنےکی بیماری ہے ِمیں اپنی اس عادت سےبہت پریشان ہوں اور اس بیماری سے نجات حاصل کرنا چاہتا ہوں ِ"
"تمہاری عمر کتنی ہے ؟" ڈاکٹر نے پوچھا ِ
مریض نے جواب دیا ِ"تیس سال "
"کیا تم محض اب رکشوں میں جھانکتے ہو،جن میں خواتین بیٹھی ہوتی ہیں ؟"
"جی ہاں_"مریض نے شرمندہ ہوتے ہوئے اقرار کیا ِ
"پھر تم یقین کر لو تمہیں کوئی بیماری نہیں ِ"
ماہرنفسیات نے اطمینان سے جواب دیا ِ"تمہاری عمر میں میری بھی یہ عادت رہی ہے ِ"

ایک دفعہ دو پاگل دوست بیٹھے باتیں کر رھ

ایک دفعہ دو پاگل دوست بیٹھے باتیں کر رھے تھے
پہلا پاگل دوست بولا :یار اگر تم یہ بتا دو کہ میری جھولی میں کیا ھے تو میں یہ انڈے تمہیں دے دونگا
دوسرا پاگل دوست : نہیں معلوم کوئی دوسرا سوال کرو
پہلا پاگل دوست بولا : اچھا چلو یار تم یہ ھی بتا دو کہ میری جھولی میں کتنے انڈے ھیں تو میں تمہیں بارہ بارہ کے انڈے دے دونگا
دوسرا پاگل دوست : نہیں یار یہ بھی نہیں معلوم کچھ اور پوچھو
پہلا پاگل دوست بولا : اچھا چلو یار تم یہ ھی بتا دو کہ یہ انڈے کس کے ھیں تو میں تمہیں وہ مرغی بھی دے دونگا
دوسرا پاگل دوست : یار تم ہمیشہ ایسے مشکل سوال ھی کیوں پوچھتے ھو

ایک چھوٹے سے بچے نے دروازہ کھولا اور اپنی بہن کے واقف کار کو دیکھ کر معصومیت سے

ایک چھوٹے سے بچے نے دروازہ کھولا اور اپنی بہن کے واقف کار کو دیکھ کر معصومیت سے بولا ۔
’’آپ روز باجی سے ملنے آجاتے ہیں ۔کیا آپ کی اپنی باجی نہیں ہیں ‘‘۔