ایک امریکن اور ایک انڈین ایک امریکن بار

ایک امریکن اور ایک انڈین ایک امریکن بار میں بیٹھے جام پر جام انڈھیل رہے تھے۔ انڈین آدمی نے امریکن سے کہا،"تم جانتے ہو میرا گھر والوں زبردستی میری شادی ایک فرسودہ خیالات والی گھریلو لڑکی سے کرنا چاہتے ہیں۔ جس سے نہ میں نے کبھی بات کی نہ کبھی ملا۔ ہم اسے "ارینجنڈ میرج" کہتے ہیں۔ میں نے بھی صاف صاف کہہ دیا کہ میں اس لڑکی سے کبھی بھی شادی نہیں کروں گا جسے میں جانتا نہیں جیسے میں پیار نہیں کرتا۔اور اب میرا باپ میرے لیے پریشانیاں کھڑی کر رہا ہے۔ میں بہت خاندانی میں گھر گیا ہوں"۔

امریکن نے اس کے جواب میں کہا۔"لو میرج کے بارے کیا کہوں ۔ ۔ ۔ ۔ ۔چلو دوست تمہیں اپنی
کہانی سناتا ہوں۔"مجھے ایک بیوہ سے پیوہ سے پیار ہو گیا۔ تین سال کے پیار کے بعد میں نے اس سے شادی کر لی۔اس بیوہ کی پہلے شوہر سے ایک لڑکی تھی جس سے دو سال بعد میرے باپ کو پیار ہو گیا اور میرے باپ نے اس کے ساتھ شادی کر لی۔اس طرح میں اپنے باپ کا سسر بن گیا اور میں اس کا بیٹا بھی تھا۔ اور میری بیٹی میری ہی ماں بن گئی اور میری بیوی میری نانی۔

Rate This Joke
No votes yet