ایک سکھ رات کے وقت موٹر سائیکل پر جا رہا

ایک سکھ رات کے وقت موٹر سائیکل پر جا رہا تھا۔ سردی بہت تھی۔ سامنے سے ٹھنڈی ہوا چل پڑی تو اُتر کر کوٹ الٹا کر کے پہن لیا اور پھر موٹر سائیکل کو کک ماری۔ سردی سے بچنے کی اس ترکیب پہ وہ اتنا خوش تھا کہ ڈھلوان سے موٹر سائیکل پھسل گئی اور وہ دھڑام سے نیچے آ رہا۔ کچھ دیر بعد بہت سے لوگ وہاں جمع ہوگئے۔ دیکھا کہ سردار جی مرے پڑے ہیں اور ایک سکھ ان کے پاس کھڑا ہے۔
اس سے لوگوں نے پوچھا۔
“ کیا ہوا ہے؟‘۔
وہ بولا۔ “ جب میں پہنچا تو سردار جی کراہ رہے تھے۔ میں نے جھک کر دیکھا تو پتا چلا کہ گردن مڑ گئی ہے میں نے زور لگا کر گردن سیدھی کی تب سے نہیں‌بولے“۔