ایک صاحبٍ ذوق نے اکبر کو لکھا۔"میں صاحبٍ ذوق ہوں، آپ کی الہامی شاعری کا پرستار

ایک صاحبٍ ذوق نے اکبر کو لکھا۔
"میں صاحبٍ ذوق ہوں، آپ کی الہامی شاعری کا پرستار اور دالہ و شیدا، اتنی استطاعت نہیں کہ آپ کے دیوان یا کلیات کو خرید کر پڑھ سکوں۔ اس لیے ازراہٴعلم دوستی اپنے دیوان کی ایک جلد بلاقیمت مرحمت فرما کر ممنون فرمایئے۔
خط دیکھ کر کہنے لگے۔
"اور سنئے۔۔۔۔آج مفت دیوان طلب فرما رہے ہیں، کل فرمائش کریں گے کہ صاحبٍ ذوق ہوں۔ مفت میں "جانکی بائی" کا گانا سنوا دیجئے۔"

Share this