سردار جی کے لطیفے

  • warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdujokes/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:51750397aaaca523ed22d1eed8674b1d' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>ایک آدمی کو نیند نہیں آتی تھی، اسکے دوست نے مشورہ دیا کہ پانچ سو تک گنو نیند آجائے گی، ابھی تین سو تک گنا تھا کہ نیند آگئی، اس نے منہ دھو کر اپنی گنتی پوری کی۔۔۔۔۔۔!!!</p>\n', created = 1490849373, expire = 1490935773, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:51750397aaaca523ed22d1eed8674b1d' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:923bec68786ad17a7a526e5b213032ce' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>Sardar Opened A Massage Parlor And The Business Failed Because It Was Self-Service<br />\nسردار جی نے مساج سنٹر کھولا ۔ ذرا بھی نہیں چلا<br />\nکیوں بھلا<br />\nسردار جی نے لکھا تھا سیلف سروس</p>\n', created = 1490849373, expire = 1490935773, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:923bec68786ad17a7a526e5b213032ce' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:fc8ad8db9b42c7d965364a8d619b11aa' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>سردار جی کی ٹکر ایک ٹرک سے ہو گئی۔ بہت سے چوٹیں آئیں۔ ایک دوست ملنے کے لیے آیا اور اس نے سردار جی سے پوچھا۔ حادثہ کیسے ہوا؟<br />\nسردار جی بولے۔<br />\nبس جی کچھ سمجھ نہیں آیا۔ میں رات موٹرسائیکل پر جا رہا تھا کہ سامنے سے دو موٹر سائیکل آتے ہوئے دکھائی دئیے میں نے ان دونوں کے درمیان سے گذرنا چاہا تو کوئی چیز آ ٹکرائی۔</p>\n', created = 1490849373, expire = 1490935773, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:fc8ad8db9b42c7d965364a8d619b11aa' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:6ae91855868e9f141fb5d46f7b56b20c' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>انار کلی میں سکھ کو دیکھ کر بہت سے لوگ جمع ہو گئے ہجوم اکٹھا ہوتے دیکھ کر سردار جی اطمینان سے بولے۔ ’’بھئی دیکھتے جاؤ اور گذرتے جاؤ</p>\n', created = 1490849373, expire = 1490935773, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:6ae91855868e9f141fb5d46f7b56b20c' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:7dd1999a972edaf6b6bc952470173e2c' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>ایک سکھ کی جرابوں سے سخت بدبو آ رہی تھی۔ وہ جہاں جوتا اتارتا لوگ محفل چھوڑ کر بھاگ جاتے۔ ایک مرتبہ اس کی بیوی کے رشتہ داروں میں شادی تھی۔ لہذا اس نے اپنے خاوند کو نئی جرابیں لا کر دیں اور کہا۔ کہ کم از کم وہاں تو نئی جرابیں پہن کر جائیںگے۔جب سردار جی شادی میں تو تمام باراتی اٹھ کر بھاگ گئے۔ سکھ کی بیوی دوڑی دوڑی اس کے پاس آئی اور جھگڑنے کے انداز میں کہا۔ تم پھر پرانی جرابیں پہن کر آئے ہو۔ سردار نے بڑے اطمینان سے بوٹ اتار کر دکھائے اور کہا میں پہنی تو نئی جرابیں ہیں لیکن مجھے پتا تھا تم یقین نہیں کرو گی اس لیے پرانی جرابیں جیب میں ڈال لایا تھا۔</p>\n', created = 1490849373, expire = 1490935773, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:7dd1999a972edaf6b6bc952470173e2c' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:15a4c373ca9426ce0f4beb79abf6d8a8' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:4c70e2cdcbf962ac4ec9fff9e46f9b05' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:0855055faa5769cc17f8af0af3872566' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:3daa926919d3ddaaf949282f224bbbbb' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.

ایک آدمی کو نیند نہیں آتی تھی، اسکے دوس

ایک آدمی کو نیند نہیں آتی تھی، اسکے دوست نے مشورہ دیا کہ پانچ سو تک گنو نیند آجائے گی، ابھی تین سو تک گنا تھا کہ نیند آگئی، اس نے منہ دھو کر اپنی گنتی پوری کی۔۔۔۔۔۔!!!

Sardar Opened A Massage Parlor And The B

Sardar Opened A Massage Parlor And The Business Failed Because It Was Self-Service
سردار جی نے مساج سنٹر کھولا ۔ ذرا بھی نہیں چلا
کیوں بھلا
سردار جی نے لکھا تھا سیلف سروس

سردار جی کی ٹکر ایک ٹرک سے ہو گئی۔ بہت

سردار جی کی ٹکر ایک ٹرک سے ہو گئی۔ بہت سے چوٹیں آئیں۔ ایک دوست ملنے کے لیے آیا اور اس نے سردار جی سے پوچھا۔ حادثہ کیسے ہوا؟
سردار جی بولے۔
بس جی کچھ سمجھ نہیں آیا۔ میں رات موٹرسائیکل پر جا رہا تھا کہ سامنے سے دو موٹر سائیکل آتے ہوئے دکھائی دئیے میں نے ان دونوں کے درمیان سے گذرنا چاہا تو کوئی چیز آ ٹکرائی۔

انار کلی میں سکھ کو دیکھ کر بہت سے لوگ

انار کلی میں سکھ کو دیکھ کر بہت سے لوگ جمع ہو گئے ہجوم اکٹھا ہوتے دیکھ کر سردار جی اطمینان سے بولے۔ ’’بھئی دیکھتے جاؤ اور گذرتے جاؤ

ایک سکھ کی جرابوں سے سخت بدبو آ رہی تھ

ایک سکھ کی جرابوں سے سخت بدبو آ رہی تھی۔ وہ جہاں جوتا اتارتا لوگ محفل چھوڑ کر بھاگ جاتے۔ ایک مرتبہ اس کی بیوی کے رشتہ داروں میں شادی تھی۔ لہذا اس نے اپنے خاوند کو نئی جرابیں لا کر دیں اور کہا۔ کہ کم از کم وہاں تو نئی جرابیں پہن کر جائیںگے۔جب سردار جی شادی میں تو تمام باراتی اٹھ کر بھاگ گئے۔ سکھ کی بیوی دوڑی دوڑی اس کے پاس آئی اور جھگڑنے کے انداز میں کہا۔ تم پھر پرانی جرابیں پہن کر آئے ہو۔ سردار نے بڑے اطمینان سے بوٹ اتار کر دکھائے اور کہا میں پہنی تو نئی جرابیں ہیں لیکن مجھے پتا تھا تم یقین نہیں کرو گی اس لیے پرانی جرابیں جیب میں ڈال لایا تھا۔

Syndicate content