سکول کے لطیفے

اس سیکشن میں سکول سے متعلق لطیفے شامل ہیں۔

دو دوست صبح اسکول جارہے تھے۔ ایک دوست

دو دوست صبح اسکول جارہے تھے۔ ایک دوست دوسرے سے بولا۔ یہ سکہ ہے اسے اوپر کی طرف پھینکو اگر چاند پڑا تو چڑیا گھر چلیں گے۔ اگ پشت پڑی تو سرکس، اور اگر خدانخواستہ سیدھا کھڑا ہو گیا تو سکول چلے جائیں گے۔

بیٹا اسکول سے واپس آکر ماں سے بولا: ام

بیٹا اسکول سے واپس آکر ماں سے بولا: امی ! امی! دیکھئے تو میرے سر پر کیا ہے؟
ماں نے غور سے دیکھ کر کہا۔ سر پر تو صرف بال ہیںاور کچھ نہیں ہے۔
بیٹے نے کہا : امی ! ماسٹر صاحب کتنے جھوٹے ہیں ، کہہ رہے تھے ہمارے امتحان سر پر ہیں۔

بیٹا ﴿باپ سے﴾ ابو ! آج مجھے اسکول میں

بیٹا ﴿باپ سے﴾ ابو ! آج مجھے اسکول میں بہت سخت سزا ملی۔
باپ ﴿حیرت سے﴾ وہ کیوں؟
بیٹا : آج میں اسکول میں لیٹ گیا تھا۔
باپ:﴿ غصے سے ﴾ نالائق کہیں کے! میں تمہیں سکول پڑھنے کے لیے بھیجتا ہوں یا لیٹنے کے لیے۔

ایک جہاز کی اسپیشل فلائٹ پر پانچ افراد ب

ایک جہاز کی اسپیشل فلائٹ پر پانچ افراد بیٹھے ہوئے تھے۔جن میں ایک امریکن صدر بش، دوسرا سچن ٹندولکر،تیسرادلائی چھوتا ایک بچہ اور آخری ایک بوڑھا پروفیسر شامل تھا۔

خدا کا کرنا یہ ہوا کہ جہاز میں ایک فنی خرابی ہو گئی۔ مگر جہاز میں ایک پیرا شوٹ کم تھا۔
تو سب سے پہلے سچن اُٹھا اور بولامیں کرکٹ کی دنیا کا سب سے اہم نام ہون اور میری قوم کو میری ضرورت ہے یہ کہہ کر اس نے پیراشوٹ اٹھایا اور جہاز سے باہر چھلانگ لگا دی۔

پھر دلائی لامہ اٹھے اور انہوں نے کہا کہ اس وقت میری قوم بہت مشکلات میں گھری ہوئی ہے میں ان کو اکیلا نہیں چھوڑ سکتا یہ کہہ کر انہوں نے پیراشوٹ اُٹھا یا اور جہاز سے باہر چھلانگ لگا دی۔
اس کے فوری بعد صد بش اٹھا اور اس نے کہا اس وقت میں دنیا میں سب سے عقل مند انسان ہوں اور میں نے بھی عراق اور افغانستان سے شدت پسندوں کو سدھارنا ہے اس لیے میں قربانی نہیں دے سکتا ۔ اس کے ساتھ اس نے ایک بیگ اٹھا یا اور جہاز سے باہر چھلانگ لگا دی۔

اب پروفیسر بچے سے بولا۔ بیٹے میں نے پوری زندگی درس تدریس میں گزار دی ہے اور میں اپنی گزشتہ زندگی سے بہت خوش ہوں اور زندگی کی ساری خوشیاں دیکھ چکا ہوں تم ابھی چھوٹے ہو اور تم نے ابھی بہت کچھ دیکھنا ہے مجھے رہنے دو اور تم پیراشوٹ لے لو۔

بچے نے پروفیسر کی طرف اور مسکرا کر بولا۔ پروفیسر فکر کرنے کی کوئی ضرورت نہیں ہم دونوں کے لیے پیرا شوٹ موجود ہے۔ دنیا کا سب سے عقل مند انسان بش میرا اسکول بیگ لے گیا ہے۔

جناب پرنسپل صاحبہائی سکولا ۔ ب ۔

جناب پرنسپل صاحب
ہائی سکول
ا ۔ ب ۔ ۔پ
سر!
بات یہ ہے کہ میرے ابا نے مجھے فیس پانچ و روپے دی تھی۔سو تو دوتوں نے فلم پہ اُڑا دیے،150 بوتل اور سموسے پہ لگا دیے،50 کا سمینہ کو بیلنس کو لوڈ کروا دیا یو فون پہ۔
باقی دوسو انگلش والی میڈم پہ شرط ہار گیا۔دوستوں سے شرط لگائی تھی کہ اس کا صرف میتھ والے سر کے ساتھ چکر ہے لیکن ان کا تو آپ کے ساتھ بھی چکر ہے
میں اب کنگال ہو گیا ہوں تو اس لئے فیس معاف کی جائے
عین نوازش ہوگئی
ایک شریف طالب علم

کلاس ون میں چاروں سمتوں کا سبق سمجھانے ک

کلاس ون میں چاروں سمتوں کا سبق سمجھانے کے بعد مس نے ایک بچے سے کہا:
اگر تمھارے بائیں طرف شمال،دائیں طرف جنوب اور سامنے مشرق ہو تو بتاؤ تمھارے پیچھے کیا ہے؟
بچے نے مس کی طرف دیکھا اور شرمندہ ہو کر سر جھکا لیا
مس نے اپنا سوال دہرا کر پر پوچھا:بتاؤ تمھارے پیچھے کیا ہے؟
بچے نے اس بار بھی شرما کر سر جھکا لیا
تیسری بار مس نے زرا سختی سے پوچھا:بتاؤ تمھارے پیچھے کیا ہے؟
بچہ روہانسی آواز میں بولا:مس پیچھے میری نیکر پھٹی ہوئی ہے میں نے امی سے کہا بھی تھا کہ سلائی کر دیں مگر سکول سے دیر ہو رہی تھی۔ مس سوری!۔