لطیفہ

آفسر : اگر سمندر میں طوفان آ جائے تو تم

آفسر : اگر سمندر میں طوفان آ جائے تو تم کیا کرو گئے؟
جہاز رانی کا طالب علم: میں فوراً لنگر ڈال دوں گا
آفسر: اسکے بعد ایک اور طوفان آ جائے تو؟
طالب علم: میں دوسرا لنگر ڈال دوں گا
آفسر: اسکے بعد ایک اور طوفان آ جائے تو؟
طالب علم: میں تیسرا لنگر ڈال دوں گا
آفسر:مگر تم اتنے لنگر کہاں سے لاؤ گئے؟
طالب علم: جہاں سے آپ اتنے طوفان لائیں گے

ایک امیر خاتون کے ہاں‌چوری ہو گئی۔پولیس

ایک امیر خاتون کے ہاں‌چوری ہو گئی۔پولیس آفیسر انکے گھر پہنچا تو خاتون نے قدرے روتی ہوئی آواز میں‌کہا :
“آج کل ایمانداری نہیں ہے دیکھیے میری نوکرانی وہ تین قیمتی لباس بھی لے بھاگی جو میں نے پیرس سے واپسی پر کسٹم کے ذریعے اسمگل کیے تھے۔

"]اصلاحی کاموں میں حصہ لینے والی ایک خات

"]اصلاحی کاموں میں حصہ لینے والی ایک خاتون نے ایک صاحب کو مہہ خانے سے نکلتے دیکھا تو بولیں۔
“کتنے افسوس کی بات ہے کہ میں آپ جیسے انسان کو ایسی جگہ سے باہر آتے دیکھ رہی ہوں۔“
وہ صاحب حیرت سے بولے۔
“خاتون! تو آپ کا کیا خیال ہے کہ میں ساری رات اندر ہی بیٹھا رہتا۔“

"]امریکا کے ایک پاگل خانے میں دو ماہرین

"]امریکا کے ایک پاگل خانے میں دو ماہرین نفسیات ایک پاگل کی دماغی حالت کا اندازہ کرنے کے لیے اس سے سوالات کر رہے تھے۔
“امریکا کا پہلا صدر کون تھا؟“ایک ماہر نفسیات نے پوچھا۔
“جارج واشنگٹن۔“پاگل نے جواب دیا۔
“درست۔اور ہمارے دوسرے صدر کون تھے؟“
“جان ایڈم“۔پاگل نے بلا تامل جواب دیا۔
“بلکل ٹھیک۔“ ماہر نفسیات نے کہا اور خاموش ہو کر چند لمحے بعد دوسرے ماہر نفسیات نے اپنے ساتھی کو ٹہوکا دیا اور سرگوشی میں کہا۔
“اس پاگل کی دماغی حالت تو کافی اچھی معلوم ہوتی ہے۔اب تم اس سے امریکا کے تیسرے صدر کا نام بھی پوچھ لو۔“
“میں اصل میں اس لیے رک گیا ہوں کہ امریکا کے تیسرے صدر کا نام تو مجھے خود بھی نہیں معلوم۔“ماہر نفسیات نے بے بسی سے کہا۔

اپنے گھر میں اندھیرا دیکھ کر ایک زمین دا

اپنے گھر میں اندھیرا دیکھ کر ایک زمین دار نے نوکر سے پوچھا:
کیا آج لالٹین جلانا بھول گئے ہو۔یہ اندھیرا کیوں ہے؟
نوکر: مٹی کا تیل ختم ہو گیا ہے ۔لالٹین کیسے جلاتا؟
زمیندار:تو اس سے کیا ہوا؟پانی ڈال کر لالٹین جلا دو
نوکر(حیرت سے)لیکن پانی سے لالٹین کیسے جل سکتی ہے
زمیندار نے ناراض ہوتے ہوئے کہا:تم بڑے بےوقوف لگتے ہو
ارے الو کے پٹھے ! لالٹین کو کیسے معلوم ہوگا کہ تم نے اس میں مٹی کے تیل کی بجائے پانی ڈالا ہے

ایک آدمی حلوائی کے دکان پر گیا اور گلاب

ایک آدمی حلوائی کے دکان پر گیا اور گلاب جامن کو انگلی لگا کر پوچھا کہ یہ کتنے کا ہے اور پھر اپنی انگلی پر لگا شیرا دیوار پر لگا دیا جس کو کھانے کے لئے مکھی جلدی سے آئی ، اور پھر مکھی کو دیکھ کر چھپکلی اسکو کھانے آئی پھر چھپکلی کو دیکھ کر کونے میں بیٹھی بلی چھپکلی کی طرف لپکی اور بلی کو دیکھ کر گلی کی نکر پر کھڑا کتا بھاگا اسکو کھانے کے لئے، اسی بھیڑ میں مکھی ، چھپکلی، بلی ، کتا، حلوائی کے دودھ کے کڑاھی میں گر پڑے اور سارا دودھ ضائع ہو گیا، حلوائی نے اس آدمی کو پکڑا لیا کے تم نے میرا اتنا نقصان کر دیا، تو وہ بچارا مسکین بولا کہ میں تو دیوار پر انگلی لگائی تھی