پاگلوں کے لطیفے

  • warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdujokes/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:8f2b2c8a3843e1f6f20cd0e0a47a4de4' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>وزیراعظم پاگل خانے کا معائنہ کرنے گیا۔ پاگل خانے کے دروازے </p>\n<p>پر اس کی ملاقات ایک پاگل سے ہوئی جوقدرے ٹھیک لگ رہا تھا۔ </p>\n<p>اس نے وزیر اعظم سے پوچھا تم کون ہو۔ میں اس ملک کا </p>\n<p>وزیراعظم ہوں۔ تو پاگل نے جب میں یہاں آیا تھا تو میں بھی یہی </p>\n<p>کہتا تھا کہ میں اس ملک کا وزیراعظم ہوں۔ خیر کچھ دن یہاں رہو </p>\n<p>گے تو ٹھیک ہو جاؤ گے۔</p>\n', created = 1490849680, expire = 1490936080, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:8f2b2c8a3843e1f6f20cd0e0a47a4de4' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:42cec4bea9da6f34fa437213c964ef98' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>ایک پاگل دوسرے سے: بھائی آپ نے کہاں تک تعلیم حاصل کی ہے۔<br />\nدوسرا میں نے بی اے کر لیا ہے اب میٹرک کا داخلہ بھیج رہا ہوں اور تم نے۔<br />\nپہلا۔ میں تو ابھی ایم اے میں ہوں میٹرک کا امتحان اگلے سال دوں گا۔</p>\n', created = 1490849680, expire = 1490936080, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:42cec4bea9da6f34fa437213c964ef98' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:12d49e4b5e79c43fc6cde69fbd0936c4' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>ایک جہاز کافی بلندی پر اڑ رہا تھا کہ پائیلٹ نے اچانک زور زور سے ہنسنا شروع کر دیا۔ لوگوں نے ہنسنے کی وجہ پوچھی تو وہ کھلکھلا کر بولا۔<br />\nمیں تو یہ سوچ کر ہنس رہا ہوں کہ جب پاگل خانے والوں کو پتہ چلے گا کہ میں فرار ہو گیا ہوں . تو کتنا مزہ آئے گا۔</p>\n', created = 1490849680, expire = 1490936080, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:12d49e4b5e79c43fc6cde69fbd0936c4' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:b37fe6661d4d202136774fe9c6963d2a' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>میں اور میری بیوی کالج کی ری یونین پارٹی میں مدعو تھے۔ ہمارے سے اگلے والے ٹیبل پر ایک عورت بیٹھی کبھی کبھی پاگلوں جیسی حرکات کرنے لگتی۔</p>\n<p>میں اس کی طرف دیکھا تو میری بیوی نے پوچھا۔ کیا تم اسے جانتے ہو۔<br />\n\"یہاں یہ میری پرانی منگیتر ہے۔سنا ہے جب میں نے اسے چھوڑا تو تب سے اس کو پاگل پن کے دورے پڑنا شروع ہو گئے ہیں۔\"<br />\nمیری بیوی نے ایک حیرت بھری نگاہ اس پر ڈالی۔ اور کہا<br />\n\"کوئی اپنے بچ جانے پر اتنا خوش کیسے ہو سکتا ہے کہ پاگل ہو جائے۔\"</p>\n<p>اور یہاں سے لڑائی شروع ہو گئی۔</p>\n', created = 1490849680, expire = 1490936080, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:b37fe6661d4d202136774fe9c6963d2a' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '1:4a2d8b10cd1fb7f99782d3e1900f9668' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: UPDATE cache_filter SET data = '<p>پاگل خانے کا دورہ کرنے والی ٹیم نے ایک کمرے میں دیکھا کہ میل نرس جیسے ہی پیشنٹ کو انجیکشن لگانے بڑھتاہے پاگل منہ سے فائرنگ کی آوازیں نکالنے لگتااور نرس کی طرف ھاتھ سے پستول کا اشارہ کرتا ہے اور نرس فورا\" مرنے کی اداکاری کر کے گر جاتا ہے پھر دوبارہ جیسے ہی انجیکشن لگانے بڑھتا پاگل پھر یہی حرکت کرتا نرس بھی دوبارہ مرنے کی ایکٹنگ کرتامسلسل ایسا کرتے دیکھ کے اک ٹیم ممبر نے آگے بڑھ کے نرس سے کہا کہ<br />\n\" وہ تو پاگل ہے آپ اپنا کام کریں آپ کیوں اسکا ساتھ دے رہے ہیں\"<br />\nنرس نے کہا\"اگر میں مرنے کی ایکٹنگ نہ کروں تو یہ سمجھتا ہے کہ اسکی پستول خراب ہو گئی ہے اور یہ اٹھ کے مجھ پر جوڈو کراٹے کے وار کر کے مارنے لگتا ہے\"</p>\n', created = 1490849680, expire = 1490936080, headers = '', serialized = 0 WHERE cid = '1:4a2d8b10cd1fb7f99782d3e1900f9668' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 112.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:15a4c373ca9426ce0f4beb79abf6d8a8' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:4c70e2cdcbf962ac4ec9fff9e46f9b05' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:0855055faa5769cc17f8af0af3872566' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
  • user warning: Table './freeurdujokes/cache_filter' is marked as crashed and should be repaired query: SELECT data, created, headers, expire, serialized FROM cache_filter WHERE cid = '2:3daa926919d3ddaaf949282f224bbbbb' in /home/freeurdujokes/public_html/includes/cache.inc on line 27.
اس سیکشن میں پاگل ، پاگلوں ، پاگل خانوں ، نفسیاتی امراض سے متعلق لطیفے شامل ہیں۔

وزیراعظم پاگل خانے کا معائنہ کرنے گیا۔

وزیراعظم پاگل خانے کا معائنہ کرنے گیا۔ پاگل خانے کے دروازے

پر اس کی ملاقات ایک پاگل سے ہوئی جوقدرے ٹھیک لگ رہا تھا۔

اس نے وزیر اعظم سے پوچھا تم کون ہو۔ میں اس ملک کا

وزیراعظم ہوں۔ تو پاگل نے جب میں یہاں آیا تھا تو میں بھی یہی

کہتا تھا کہ میں اس ملک کا وزیراعظم ہوں۔ خیر کچھ دن یہاں رہو

گے تو ٹھیک ہو جاؤ گے۔

ایک پاگل دوسرے سے: بھائی آپ نے کہاں تک

ایک پاگل دوسرے سے: بھائی آپ نے کہاں تک تعلیم حاصل کی ہے۔
دوسرا میں نے بی اے کر لیا ہے اب میٹرک کا داخلہ بھیج رہا ہوں اور تم نے۔
پہلا۔ میں تو ابھی ایم اے میں ہوں میٹرک کا امتحان اگلے سال دوں گا۔

ایک جہاز کافی بلندی پر اڑ رہا تھا کہ پ

ایک جہاز کافی بلندی پر اڑ رہا تھا کہ پائیلٹ نے اچانک زور زور سے ہنسنا شروع کر دیا۔ لوگوں نے ہنسنے کی وجہ پوچھی تو وہ کھلکھلا کر بولا۔
میں تو یہ سوچ کر ہنس رہا ہوں کہ جب پاگل خانے والوں کو پتہ چلے گا کہ میں فرار ہو گیا ہوں . تو کتنا مزہ آئے گا۔

میں اور میری بیوی کالج کی ری یونین پارٹی

میں اور میری بیوی کالج کی ری یونین پارٹی میں مدعو تھے۔ ہمارے سے اگلے والے ٹیبل پر ایک عورت بیٹھی کبھی کبھی پاگلوں جیسی حرکات کرنے لگتی۔

میں اس کی طرف دیکھا تو میری بیوی نے پوچھا۔ کیا تم اسے جانتے ہو۔
"یہاں یہ میری پرانی منگیتر ہے۔سنا ہے جب میں نے اسے چھوڑا تو تب سے اس کو پاگل پن کے دورے پڑنا شروع ہو گئے ہیں۔"
میری بیوی نے ایک حیرت بھری نگاہ اس پر ڈالی۔ اور کہا
"کوئی اپنے بچ جانے پر اتنا خوش کیسے ہو سکتا ہے کہ پاگل ہو جائے۔"

اور یہاں سے لڑائی شروع ہو گئی۔

پاگل خانے کا دورہ کرنے والی ٹیم نے ایک ک

پاگل خانے کا دورہ کرنے والی ٹیم نے ایک کمرے میں دیکھا کہ میل نرس جیسے ہی پیشنٹ کو انجیکشن لگانے بڑھتاہے پاگل منہ سے فائرنگ کی آوازیں نکالنے لگتااور نرس کی طرف ھاتھ سے پستول کا اشارہ کرتا ہے اور نرس فورا" مرنے کی اداکاری کر کے گر جاتا ہے پھر دوبارہ جیسے ہی انجیکشن لگانے بڑھتا پاگل پھر یہی حرکت کرتا نرس بھی دوبارہ مرنے کی ایکٹنگ کرتامسلسل ایسا کرتے دیکھ کے اک ٹیم ممبر نے آگے بڑھ کے نرس سے کہا کہ
" وہ تو پاگل ہے آپ اپنا کام کریں آپ کیوں اسکا ساتھ دے رہے ہیں"
نرس نے کہا"اگر میں مرنے کی ایکٹنگ نہ کروں تو یہ سمجھتا ہے کہ اسکی پستول خراب ہو گئی ہے اور یہ اٹھ کے مجھ پر جوڈو کراٹے کے وار کر کے مارنے لگتا ہے"

Syndicate content