مریض بے صبرے اور غصہ ور ڈاکٹر کو اپنے در

مریض بے صبرے اور غصہ ور ڈاکٹر کو اپنے درد کے متعلق تفصیل سے بتا رہا تھا۔
’’درد میرے داہنے کندھے میں ہوتا ہے۔ جیسے ہی میں آگے کو جھک کر اپنا داہنا ہاتھ اور بایاں ہاتھ پھیلاتا ہوں ،کہنیاں الٹا کر کندھے جھکاتا ہوں اور پھر جب سیدھا کھڑا ہوتا ہوں تو میرے داہنے کندھے میں درد ہونے لگتا ہے۔ ‘‘
’’ اور تمہیں یہ خیال کبھی نہیں آیا کہ تم اس پُر اسرار درد سے پیچھا چھڑا سکتے ہو۔ بشرطیکہ اپنے جسم کی ان بے ہودہ حرکات سے گریز کرو‘‘۔
ڈاکٹر نے جھنجھلا کر کہا۔
’’میں نے یہ بھی سوچا تھا ڈاکٹر صاحب ‘‘۔ مریض نے بے حد خلوص سے کہا۔
’’لیکن اوور کوٹ پہننے کا کوئی اور طریقہ میری سمجھ میں ہی نہیں آیا‘‘۔

ٹیچر ۔۔ بچو ! وعدہ کرو سگریٹ نہیں پئیو گے۔بچے ۔۔ نہیں پئیں گے ۔ٹیچر ۔۔ اور ل

ٹیچر ۔۔ بچو ! وعدہ کرو سگریٹ نہیں پئیو گے۔
بچے ۔۔ نہیں پئیں گے ۔
ٹیچر ۔۔ اور لڑکیوں کا پیچھا نہیں کرو گے،اور نہ ھی انہیں چھیڑو گے
بچے ۔۔نہیں کریں گے
ٹیچر ۔۔ اور اپنی زندگی ملک پر قربان کر دیں گے۔
بچے ۔۔ کر دیں گے،کر دیں گے،
اور ایسی زندگی کا ھم نے کرنا بھی کیا ھے ۔