Judge Jokes

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdujokes/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.

جیلر:کل صبح 6 بجے تمھیں پھانسی دی جا رہی ہےملزم:ہی ہی ہی ہی۔۔۔۔جیلر:(جھلا کر

جیلر:کل صبح 6 بجے تمھیں پھانسی دی جا رہی ہے
ملزم:ہی ہی ہی ہی۔۔۔۔
جیلر:(جھلا کر)ہنس کیوں رہے ہو؟
ملزم:میں تو اٹھتا ہی صبح 9 بجے ہوں

جج نے ملزم سے کہا:جب میں وکیل تھا تو تم نے ایک مرغی چرائی تھی پھر جب میں سرکار

جج نے ملزم سے کہا:
جب میں وکیل تھا تو تم نے ایک مرغی چرائی تھی پھر جب میں سرکاری وکیل بنا تو تم ایک بکری چرانے کے جرم میں لائے گئے اور اب جب میں جج ہوں تو تم نے بھینس چرالی ہے،آخر ایسا کیوں ہے؟
ملزم نے کہا:حضور! آپ کے ساتھ ساتھ میں نے بھی ترقی کی ہے

جج: تم تیسری بات عدالت میں آ رہے ہو، تمہیں شرم نہیں‌آتی؟ملزم: جناب، آپ تو روز

جج: تم تیسری بات عدالت میں آ رہے ہو، تمہیں شرم نہیں‌آتی؟
ملزم: جناب، آپ تو روز آتے ہیں، آپکو آتی ہے؟

مجسٹریٹ: (ملزم سے) تم نے اپنی بیوی پر کر

مجسٹریٹ: (ملزم سے) تم نے اپنی بیوی پر کرسی کیوں دے ماری؟
ملزم: جناب صوفہ بہت بھاری تھا

جج: اگر تم نے جھوٹ بولا تو جانتے ہو کہ کیا ہو گا؟ ملزم: جی میں جہنم کی آگ میں

جج: اگر تم نے جھوٹ بولا تو جانتے ہو کہ کیا ہو گا؟
ملزم: جی میں جہنم کی آگ میں جلوں گا۔
جج: اور اگر سچ بولو گے تو؟
ملزم: میں یہ مقدمہ ہار جاوٴں گا۔

Syndicate content