Nurse Jokes

warning: Creating default object from empty value in /home/freeurdujokes/public_html/modules/taxonomy/taxonomy.pages.inc on line 33.

میٹرنٹی ہوم کے باہر ایک سیاست دان دونوں ہاتھ پیچھے باندھے بے چینی سے اِدھر اُد

میٹرنٹی ہوم کے باہر ایک سیاست دان دونوں ہاتھ پیچھے باندھے بے چینی سے اِدھر اُدھر گھوم رہے تھے۔ منہ میں سگار تھا اور ذہن کہیں اورتھا۔ اچانک ہی ایک نرس نے مسکراتے چہرے اور چمکتے دانتوں کے ساتھ باہر جھانکا اور خوشخبری سنائی۔ سر آپ کے ہاںدو بچے ہوئے ہیں۔
سیاست دان یکدم چونکا۔ منہ سے سگار چھٹ سے نیچے گرا اور کہنے لگا۔
نہیں ایسا نہیں ہو سکتا، گنتی دوبارہ کراؤ

نرس ! ’’یہ ایمرجنسی آپریشن کس کا ہو رہا ہے؟‘‘اردلی! ’’ایک غریب آدمی کا جو گو

نرس ! ’’یہ ایمرجنسی آپریشن کس کا ہو رہا ہے؟‘‘
اردلی! ’’ایک غریب آدمی کا جو گولف کورس کے قریب سے گزرتے ہوئے جماہی لے رہا تھا۔ سیٹھ صاحب نے ہٹ لگائی اور بال سیدھی اس کے پیٹ میں چلی گئی‘‘۔
نرس۔ ’’اچھا ! وہ صاحب جو آپریشن تھیٹر کے باہر بے چینی سے ٹہل رہے تھے وہ شاید اس آدمی کے رشتے دار ہیں؟‘‘
اردلی۔ ’’نہیں وہ سیٹھ صاحب ہیں۔ انتظار کر رہے ہیں آپریشن مکمل ہو تو وہ بال لے کر کھیل مکمل کریں‘‘۔

ایک شخص کاایکسڈنٹ ہو گیا تھاجس سے اس کے جسم کے کئی اندرونی اعضائ بے کار ہو گئے

ایک شخص کاایکسڈنٹ ہو گیا تھاجس سے اس کے جسم کے کئی اندرونی اعضائ بے کار ہو گئے تھے۔ ڈاکٹروں نے ان کی جگہ اس کے جسم میں بندر کے کئی اعضائ لگا دئیے۔ آپریشن کامیاب رہا اور وہ شخص تندرست ہو کر چلا گیا۔’’کچھ عرصے بعد وہ شخص اسپتال کے ڈلیوری وارڈ کے برآمدے میں بے چینی سے ٹہل رہا تھا اور بار بار آتی جاتی نرسوں سے پوچھ رہا تھا۔کیا ہوا؟‘‘ تھوڑی دیر بعد ایک نرس آئی تو اس نے لپک کر پھر اپنا سوال دہرایا۔ کیا ہوا نرس؟‘‘نرس نے منہ بنا کر جواب دیا پیدا ہوتے ہی وہ روشندان پر جا بیٹھا ہے نیچے اترے تو معلوم ہو۔

پاگل خانے کا دورہ کرنے والی ٹیم نے ایک ک

پاگل خانے کا دورہ کرنے والی ٹیم نے ایک کمرے میں دیکھا کہ میل نرس جیسے ہی پیشنٹ کو انجیکشن لگانے بڑھتاہے پاگل منہ سے فائرنگ کی آوازیں نکالنے لگتااور نرس کی طرف ھاتھ سے پستول کا اشارہ کرتا ہے اور نرس فورا" مرنے کی اداکاری کر کے گر جاتا ہے پھر دوبارہ جیسے ہی انجیکشن لگانے بڑھتا پاگل پھر یہی حرکت کرتا نرس بھی دوبارہ مرنے کی ایکٹنگ کرتامسلسل ایسا کرتے دیکھ کے اک ٹیم ممبر نے آگے بڑھ کے نرس سے کہا کہ
" وہ تو پاگل ہے آپ اپنا کام کریں آپ کیوں اسکا ساتھ دے رہے ہیں"
نرس نے کہا"اگر میں مرنے کی ایکٹنگ نہ کروں تو یہ سمجھتا ہے کہ اسکی پستول خراب ہو گئی ہے اور یہ اٹھ کے مجھ پر جوڈو کراٹے کے وار کر کے مارنے لگتا ہے"

ایک سردار جی آپریشن تھیٹر کے سامنے بڑی ب

ایک سردار جی آپریشن تھیٹر کے سامنے بڑی بیتابی سے ٹہل رہے تھے۔ کچھ دیر بعد ایک نرس ان کے پاس آئ اور بولی
سردار جی مبارک ہو آپ ایک بیٹے کے باپ بنے ہیں۔مجھے اس موقعے پہ کیا انعام دیں گے
سردار:جو مرضی لے لینا مگر میری بیوی کو پتہ نہ چلے مٰیں اسے سرپرائز دینا چاہتا ہوں

Syndicate content